آج کے مسلمانوں کے لیے نبی کریم ﷺ کی جانب سے لکھوایا جانے والا سبق آموز خط

اسلام وہ دین حق ہے جو دنیا کے لئے امن اور سلامتی کا پیغام لے کر آیا مگر آج دنیا اسے شدت پسندی کے ساتھ منسلک کررہی ہے اور بدقسمتی سے کچھ بھٹکے ہوئے مسلمانوں کا طرز عمل بھی اسلام کے منفی تاثر کی ایک وجہ ہے۔ اقلیتوں کے حقوق کے متعلق اسلام کا کیا حکم ہے اس کا اندازہ اس تاریخی خط سے لگایا جاسکتا ہے جو 628 عیسوی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے عیسائیوں کے نام لکھا گیا۔اس مبارک خط کی ایک نقل ماؤنٹ ثنائی کیسینٹ کیتھرین خانقاہ میں محفوظ کی گئی۔ اقلیتوں کے

خلاف برسرپیکار افراد اور گروہوں کو ضرور دیکھنا چاہیے کہ پیغمبر خدا ﷺ نے ان کے ساتھ کیسا برتاؤ کیا اور اپنی امت کو اس ضمن میں کیا حکم دیا۔ اس خط کا مفہوم درج ذیل ہے۔یہ محمدﷺ ابن عبداللہ کا پیغام ہے، بطور معاہدہ، دور و نزدیک کے عیسائیوں کے نام۔ بیشک میں، میرے ساتھی اور میرے پیروکار ان کا دفاع کرتے ہیں، کیونکہ عیسائی میری رعایا ہیں اور خدا کی قسم میں انہیں ناخوش کرنے والی ہر بات کے خلاف ہوں۔ ان پر کوئی جبر نہیں۔ ان کے منصفین کو ان کے عہدوں سے ہٹایا نہیں جائے گا اور نہ ہی ان کے راہبوں کو ان کی خانقاہوں سے نکالا جائے گا۔ کوئی بھی ان کی عبادت گاہوں کو تباہ نہیں کرے گا، نقصان نہیں پہنچائے گا، اور نہ ہی یہاں سے کوئی چیز اٹھا لے جائے گا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *