جو مانگو گے ملے گا بس ہمیں تسلیم کر لو۔۔۔ یواے ای کے ساتھ تعلقات قائم کرنے کے ن بعد اسرائیل نے کونسے اسلامی ملک کو بڑی پیشکش کرا دی ؟ امت مسلمہ کو ہلا دینے والی خبر

مقبوضہ بیت المقدس (ویب ڈیسک) اسرائیل کے بدنام زمانہ بیرون ملک خفیہ آپریشن کے ذمہ دار اداے موسادکے سربراہ یوسی کوہن متحدہ عرب امارات کیدورے اور اماراتی حکام سے ملاقاتوں کے بعد خلیجی ریاست بحرین پہنچ گئے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق کوہن کو ابوظبی اور اسرائیل کے مابین تعلقات کی بحالی کے معاہدے کا گاڈ فادر سمجھا جاتا ہے۔

اب وہ بحرین کیساتھ تعلقات استوار کرنے کے مشن پر ہیں۔مختلف اسرائیلی اور مغربی رپورٹس میں یہ ذکر کیا گیا کہ بحرین وہ ملک ہوسکتا ہے جو متحدہ عرب امارات کے بعد قابض ریاست کے ساتھ امن معاہدے پر دستخط کرے گا۔ بحرین امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے فلسطین کے معاملے کے لیے تیار کردہ صدی کی ڈیل کے نام سے موسوم منصوبے کو قبول کر چکا ہے۔امارات سے تعلقات نارمل ہونے کے بعد یہ پہلا موقع ہے جب موساد کے سربراہ نے خلیج میں کسی عرب ریاست کے آئندہ دورے کا اعلان کیا جس کا اس ملک کے ساتھ قبضے سے عوامی تعلقات نہیں ہیں۔اسرائیلی میڈیا نے اس سے قبل گذشتہ جون میں یہ اطلاع دی تھی کہ یوسی کوہن اپنے رہ نمائوں کو غرب اردن کے الحاق کے منصوبے پر عمل درآمد روکنے کی تجویز دی چکے تھے جس میں انہوں نے کہا تھا کہ ہم غرب اردن کا الحاق روک کر بعض عرب ممالک کیساتھ تعلقات استوار کرسکتے ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.