یہ چیز میرے عزیز۔۔۔!!!حکومت کی جانب سے قرضہ لینے میں کتنے روپے کمی ریکارڈ ؟ جان کر پٹواری بھی نئے پاکستان کا نعرہ لگانے پر مجبور

اسلام آباد (ویب ڈیسک) حکومت کی جانب سے سٹیٹ بینک سے قرضہ لینے کی شرح میں گزشتہ مالی سال کے دوران 71 فیصدکی کمی ریکارڈکی گئی ہے۔سرکاری اعدادوشمارکے مطابق 12 جولائی 2019 سے لے کر10 جولائی 2020 تک حکومت کی جانب سے سٹیٹ بینک سے قرضہ لینے کاحجم 285.7 ارب روپے سے کم ہوکر82.7 ارب روپے رہ گیا۔

اسی طرح نجی شعبہ کو قرضوں کی فراہمی میں بھی اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔12 جولائی 2019 سے لے کر10 جولائی 2020 تک نجی شعبہ کوقرضہ کا حجم میں منفی 119.2 ارب روپے سے بہتر ہوکرمنفی 84.7 ارب روپے رہ گیا ۔گزشتہ مالی سال کے دوران زرعی قرضوں کا حجم 1080 ارب روپے رہا۔ گذشتہ سے پیوستہ مالی سال میں زرعی قرضوںکا حجم 1028 ارب روپے رہا تھا۔ دوسری جانب پاکستان کی بیرونی تجارت ساڑھے پندرہ فیصد کم ہو گئی مجموعی طور پر پاکستان کی برآمدات میں 7.5 فیصد اور درآمدات میں 19.3 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔سٹیٹ بینک کے مطابق گزشتہ مالی سال20 -2019 کے دوران پاکستان کی دوسرے ملکوں کے ساتھ اشیا اور سروسز کی تجارت کا مجموعی حجم 78 ارب 65 کروڑ 70 لاکھ ڈالر رہا جو پہلے سے 14 ارب 37 کروڑ ڈالر کم ہے،بارہ ماہ میں پاکستان سے اشیا اور سروسز کی برآمد کا مجموعی حجم 27 ارب 95 کروڑ 40 لاکھ ڈالر رہا جبکہ اشیا اور سروسز کی درآمدات پر 50 ارب 70 کروڑ 30 لاکھ ڈالر خرچ ہوئے۔رپورٹ کے مطابق گزشتہ مالی سال بھی پاکستان کا سب سے بڑا تجارتی پارٹنر چین ہی رہا، دونوں ملکوں کی باہمی تجارت کا حجم 11 ارب 21 کروڑ 79 لاکھ ڈالر رہا جو پہلے سے 6.7 فیصد کم ہے تاہم چین کے ساتھ پاکستان کی زیادہ تجارت کی بنیادی وجہ چین کی پاکستان کو درآمدات ہیں جو مجموعی ملکی درآمدات کا 22.5 فیصد بنتی ہیں۔ پاکستانی برآمدات کی سب سے بڑی منڈی گزشتہ سال بھی امریکا ہی رہی، سال کے دوران امریکا کو پاکستانی برآمدات کا حجم 3 ارب 89 کروڑ 79 لاکھ ڈالر تھا جو پاکستان کی مجموعی برآمدات کا 17.3 فیصد ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.